چند مفید احتیاطی تدابیر

بہت زیادہ پرہیز جس سے تخلیط مرض ہو‘صحت کے لئے سود مند نہیں‘بلکہ اعتدال کے ساتھ پرہیز مفید ہوتاہے۔ حکیم جالینوس نے اپنے ہم نشینوں کو ہدایت کی کہ تین چیزوں سے بچتے رہو۔ اور چار چیزوں کو اختیا ر کرلو۔ پھر تم کو کسی معالج کی ضرورت نہ پیش آئے گی۔گردوغبار‘دھواں اور بدبودار گندی چیزوں سے خود کو دور رکھو‘ چکنائی‘خوشبو شیرینی اور حمام کا استعمال کرو۔ اور شکم سیری کی حالت میں کھانا نہ کھاﺅ اور باذ روج اور ریحان کو ساتھ استعمال کرو۔اور شام کے وقت اخروٹ نہ کھانا‘اور جو زکام میں مبتلا ہو وہ چت نہ سوئے۔اور رنجیدہ شخص ترش چیز نہ کھائے اور فصد کرانے والا شخص تیز روی نہ اختیار کرے اس لئے کہ یہ موت کا پیش خیمہ ہے‘اور جس کے آنکھ میں تکلیف ہے وہ قے نہ کرے‘موسم گرم میں زیادہ گوشت کا استعمال نہ کرو‘سردی کی وجہ سے بخار کا مریض دھوپ میں نہ سوئے اور پرانے بیج دار بیگن کے قریب بھی نہ جاﺅ۔ جو موسم سرما میں روزانہ ایک پیالہ گرم پانی پی لے تو وہ بہت سی بیماریوں سے محفوظ ہوگیا اور جس نے حمام کرتے وقت انار کے چھلکے سے اپنے جسم کو ملا وہ داد و خارش سے نجات پاگیا۔
جس نے سوسن کے پانچ دانے تھوڑی سی مصطگی رومی‘عود خام اور مشک کے ہمراہ استعمال کرلیا زندگی بھر اس کا معدہ نہ کمزور ہوگا اور نہ فاسد ہوگا‘اور جس نے تخم تربوز شکر کے ساتھ استعمال کیا‘اس کا معدہ پتھری سے خالی ہوگا۔ اور سوزش پیشاب سے اسے نجات مل جائے گی۔